عمان کے سلطان قابوس بن السعید کا انتقال،ھیثم بن طارق نے حلف اٹھالیا

مسقط(این این آئی)عمان کے سلطان قابوس بن السعید کے انتقال کے بعد ان کے چچا زاد بھائی ھیثم بن طارق السعید کو عمان کا نیا سلطان بنادیا گیا۔عمان کے سرکاری میڈیا کی رپورٹ کے مطابق 65 سالہ سابق وزیر ثقافت و ورثہ نے سلطان قابوس کی وفات کے اعلان کے چند گھنٹوں بعد ہی شاہی خاندان کونسل کے سامنے اپنے عہدے کا حلف اٹھا لیا۔ حکام نے بغیر کسی وضاحت کے سلطان قابوس کی جانب سے جانشین نامزد کرنے کے لیے لکھا گیا خط کھولا اور ھیثم بن طارق کے نئے حکمران ہونے کا اعلان کردیا۔عمانی حکومت نے ٹوئٹر پر اعلان کیا کہ شاہی خاندان کونسل کے اجلاس میں اسے سلطان نامزد کرنے کا فیصلہ کیا گیا جسے سلطان نے چنا ہے جس کے بعد ھیثم بن طارق نے ملک کے نئے سلطان کی حیثیت سے حلف اٹھا لیا۔عمان کے نئے سلطان ھیثم بن طارق کو 2013 میں سلطان قابوس نے عمان کی ترقیاتی کمیٹی کا سربراہ نامزد کیا تھا اس کے علاوہ وہ وزیر قومی ورثہ و ثقافت کے عہدے پر بھی فائز تھے۔واضح رہے کہ مشرق وسطیٰ کے سب سے طویل عرصے تک برسر اقتدار رہنے والے رہنما سلطان قابوس علالت کے باعث 79 سال کی عمر میں جمعے کی رات انتقال کر گئے تھے۔ان کی وفات پر 3 دن کے سرکاری سوگ اور 40دن تک پرچم سرنگوں رکھنے کا اعلان کیا گیا۔واضح رہے کہ سلطان قابوس بڑی ا?نت کے کینسر کے باعث کافی عرصے سے بیمار تھے۔عمان کی سرکاری خبررساں ادارے نے سلطان کی موت کی وجہ کا اعلان نہیں کیا لیکن وہ طویل عرصے سے علیل تھے اور ایک ماہ قبل ہی بیلجیئم میں زیر علاج رہ کر وطن واپس لوٹے تھے۔ان کے سوگواران میں کوئی جانشین شامل نہیں کیوں کہ وہ غیر شادی شدہ تھے جبکہ نہ تو ان کے کوئی بچے تھے اور نہ ہی کوئی بھائی تھا۔سلطان قابوس نے ایک اعتدال پسند لیکن فعال خارجہ پالیسی پر عمل پیرا ہو کر جزیرہ نما عرب کو پسماندہ سے جدید ریاست میں ڈھالا۔سعودی سربراہی میں قائم گلف تعاون کونسل میں اپنی رکنیت محفوط بناتے ہوئے انہوں نے عالمی طاقتوں کے ایران کے ساتھ جوہری معاہدے میں اپنا کردار ادا کیا اور عمان ایک بہترین ثالث کے طور پر سامنے آیا۔سلطان قابوس کی وفات ایسے وقت میں ہوئی کہ جب تہران اور واشنگٹن کے مابین کشیدگی عروج پر ہے جس میں عراق میں ایرانی جنرل کی ہلاکت کے جوابی حملے کے نتیجے میں اسلامی جمہوریہ پر نئی پابندی لگادی گئیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں