کشمیر کی بگڑتی ہوئی صورتحال پر اسپیکر اسد قیصر کی ایرانی مجلس اسلامی کے سربراہ علی لاریجانی سے ٹیلیفونک رابطہ

ُاسلام آباد سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر نے ایران کے اسپیکر ڈاکٹر علی لاریجانی سے ٹیلی فون کے ذریعے رابطہ کرکے انہیں بھارت کی حکومت کی طرف سے بھارت کے دستور کے آرٹیکل 35۔اے اور آرٹیکل 370کے خاتمے کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال سے آگاہ کیا ۔ اس دوران دونوں رہنمائوں نے کشمیر سے متعلق عالمی فورموں پر مشترکہ لائحہ عمل اپنانے پر اتفاق کیا جبکہ ایرانی مجلس اسلامی کے سربراہ نے کشمیر کی صورتحال بہتر ر مصالحتی کردار کی پیش کش کرتے ہوئے کہاکہ مشکل اور مظلومیت کی اس گھڑی میں ایران کشمیریوں کو تنہا نہیں چھوڑے گا۔ ہفتہ کو سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر نے ایران کے اسپیکر ڈاکٹر علی لاریجانی سے ٹیلی فون کے ذریعے رابطہ کرکے انہیں بھارت کی حکومت کی طرف سے بھارت کے دستور کے آرٹیکل 35۔اے اور آرٹیکل 370کے خاتمے کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال سے آگاہ کیا ۔ انہوں کہا کہ بھارت کی جانب سے ان آرٹیکلز کا خاتمہ محکوم کشمیری عوام کے جذبہ حریت اور تحریک آزادی کشمیر پر شب خون مارا ہے۔اسپیکر نے بتایا کہ پاکستان کی پارلیمان نے صورتحال کا جائزہ لینے کے لئے 6 اور 7 اگست، 2019 کو ہنگامی اجلاس منعقد کیا اور اس ضمن میں ایک متفقہ قرارداد منظور کی۔انہوں نیایرانی ہم منصب کو کشمیر میں ہونے والی انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے خلاف اور جموں و کشمیر کے عوام کی حق خودارادیت دلوانے جس کا اقوام متحدہ کی قراردادوں میں ان سے وعدہ کیا گیا ہے کے لیے آواز اٹھانے کا کہا۔اسپیکر اسد قیصر نے کہاکہ اس مجرمانہ فعل کے علاوہ بھارت نے پوری کشمیر ی قیادت کو گرفتار کر لیا گیا ہے جس میں استصواب رائے کے حق میں حریت کانفرنس کے رہنما ئوں اور سابقہ وزرا اعلی بھی شامل ہیں۔ اپنے ہم منصب کو اسپیکر نے کہا کہ پوری مقبوضہ وادی کا محاصرہ کر لیا گیا ہے اور صبح سے شام تک کے لئے کر فیو نافذ کر دیا گیا ہے، انٹر نیٹ سروسز معطل کر دی گئی ہیں اور ہر قسم کے دیگر مواصلاتی رابطوں کی مکمل ناکہ بندی کر دی گئی ہے۔اسپیکر نے کہا کہ ایسے مایوس کن اقدامات نے خطے میں پہلے سے گھمبیر صورتحال کو مزید سنگین کر دیا ہے ۔مزید برآں بھارتی افواج کی طرف سے لائین آف کنٹرول کی خلاف ورزی روزمرہ کا معمول بن چکی ہے اور بھارتی افواج بے گناہ شہریوں کے خلاف کلسٹر بموں کا استعمال کر رہی ہے جس سے مرد، خواتین اور بچے شہید اور زخمی ہورہے ہیں ۔ایران کے اسپیکر نے کہا کہ وہ خطے کی گھمبیر حالات سے آگاہ ہیں۔ انہوں نے کشمیر کے مسئلے کو ایک عالمی مسئلہ قرار دیتے ہوئے اس کو کشمیری عوام کی امنگوں اور اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق حل کرنے سے اتفاق کیا۔ انہوں نے کشمیر عوام کے حق خوداردیت کے اصول کے لیے تحریک کی حمایت کا یقین دلایا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں