میکسیکو سرحد پر دیوار، عدالت نے رقم استعمال کرنے سے روک دیا

واشنگٹن (این این آئی) امریکی جج نے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو میکسیکو سرحد پر دیوار کی تعمیر کے لیے رقم استعمال کرنے سے روک دیا۔غیرملکی خبر رساں ادارے کے مطابق فیصلہ بارڈرنیٹ ورک فار ہیومن رائٹس اور امیگریشن ریفارم گروپ کی جانب سے دائر درخواست پر سنایا گیا۔وفاقی جج کا کہنا ہے کہ بارڈرپر سکیورٹی کی اہمیت کو کم نہیں کرنا چاہتے مگرعوامی مفادات کو بھی نظر انداز نہیں کیا جاسکتا۔یاد رہے کہ 724 کلو میٹرطویل دیوار کی تعمیر پر ملٹری بجٹ سے 3.6بلین ڈالر کی رقم استعمال ہونا تھی۔خبر رساں ادارے کے مطابق وفاقی جج ڈیوڈ برونس نے کیس کی سماعت ٹیکساس میں کی، عدالت کی طرف سے 21 صفحات پر مبنی حکم امتناعی جاری کیا گیا ہے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے ’’رائٹرز‘‘ کے مطابق امریکی فیصلہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ انتظامیہ کے لیے شدید دھچکا کا باعث بنے گا کیونکہ ٹرمپ چاہتے ہیں کہ آئندہ سال نومبر 2020ء تک سرحد پر دیوار تعمیر کی جا سکے گی تاکہ مہاجرین کو غیر قانونی طور پر ملک میں آنے سے روکا جا سکے۔دوسری طرف محکمہ انصاف کے ترجمان کا کہنا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ انتظامیہ نے عدالتی فیصلے کو چیلنج کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔گزشتہ سال فروری کے دوران امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے نے واضح انداز میں کہا تھا کہ پینٹا گون کے پیسوں سے فنڈز جاری کیے جائیں تاکہ دیوار تعمیر کی جا سکے جس پر کانگریس کے رہنماؤں نے اس تجویز کو مسترد کر دیا تھا۔ کانگریس کے اعلیٰ ڈیموکریٹک حکام نے فیصلے پر شدید تنقید کی تھی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں