سویڈن کو جمہوریہ کوریا اور امریکہ کے درمیان ثالثی کی ضرورت نہیں

پیانگ یانگ: سویڈن کو جمہوریہ کوریا اور امریکہ کے درمیان سفارتی ثالثی کی مزید کوئی ضرورت نہیں ہے،ان خیالات کا اظہار جنوبی کوریا وزارت خارجہ کے اعلیٰ عہدیدار نے کہا ہے ،وزارت کے گشتی سفیر کم مائی اونگ گل نے کوریا کی سرکاری خبررساں ایجنسی کو بتایا ہے کہ سٹاک ہوم پچھلی سیٹ پر بیٹھے ڈرائیور کا کردار ادا نہ کرے ،جمہوریہ کوریا سویڈن کی طرف سے امریکہ جنوبی کوریا ورکنگ مذاکرات کیلئے مقام فراہم کرنے کی تعریف کرتا ہے،لیکن اب جب کہ امریکہ اور جمہوریہ کوریا ایک دوسرے کے موقف کو اچھی طرح جانتے ہیںتو سویڈن کو اب مزید دونوں ملکوں کے درمیان مذاکرات کیلئے کام کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ اگر سویڈن پچھلی سیٹ پر بیٹھے ڈرائیور کا رویہ اختیار کرتا ہے تو اسے غیر ضروری تصور کیا جائے گا۔ یاد رہے کم نے گزشتہ دنوں کہا تھا کہ جنوبی کوریا معاملات سے متعلق امریکہ کے خصوصی نمائندے سٹیفن بیگن نے پیانگ یانگ کو ایک تیسرے ملک کے ذریعے پیغام بھیجاتھا کہ وہ ایٹمی مسئلے پر دستمبر میں مذاکرات کرسکتے ہیں لیکن انہوں نے اس وقت تیسرے ملک کا نام نہیںبتایا تھا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں