ملک توڑنے میں مولوی نہیں بلکہ وہ لبرل طبقہ ملوث ہیں جو آج بھی اقتدار کے مزے لوٹ رہی ہیں:مولاناحافظ حمداللہ

(ویب ڈیسک)
جمیعت علماءاسلام پاکستان کے مرکزی رہنما سینیٹر حضرت مولاناحافظ حمداللہ نےکہا ہے کہ ملک توڑنے میں مولوی نہیں بلکہ وہ لبرل طبقہ ملوث ہیں جو آج بھی اقتدار کے مزے لوٹ رہی ہیں ان جدی پشتی لوٹے لٹیروں نے ملک و قوم کی نہیں بلکہ ہمیشہ اپنی ذاتی مفاد کو ترجیح دی انہوں نے سکھر بشیرآباد میں قدیمی مدنی مسجد کو شہید کرنے اور دیگر مساجد کے خلاف کارروائی کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ انتظامیہ کے اس طرح ناروا اور اسلام دشمن اقدامات ناقابل برداشت ہے

انہوں نے مطالبہ کیا کہ جمعیت علماءاسلام کے گرفتار کارکنوں کو فوری طور پر رہا کرکے مساجد شہید کرنے والے اہلکاروں کے خلاف فوری طور پر کاروائی کی جائے ان خیالات کااظہار انہوں نے گزشتہ روز تحصیل حاصل پور مدرسہ جامعہ ابوہریرہ میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی پریس کانفرنس میں پاکستان مسلم لیگ ن کے ایم پی اے محمد افضل گیلو اور جمعیت علماءاسلام کے دیگر عہدیداران بھی موجود تھے انہوں نے کہا کہ غیر ملکی شہریت کے حامل مملکت میں غداری اور وفاداری کے میڈل بانٹ رہے ہیں

حالانکہ انکی اپنی حیثیت اور کردار متنازعہ اور مشکوک ہیں غیر ملکی شہریت اور ان ممالک کی وفا کا عہد کرنے والے وفادار جب کہ مملکت میں رہنے اور ان سے وفا نبھانے والے غدار ٹہررہے ہیں انہوں نے کہا کہ فیشن اور ثقافت کے نام پر ملک میں فحاشی و عریانی اور مغربی کلچر قبول نہیں مغربی تہذیب اور طور طریقے پروان چڑھانے کے لئے حکومتی سرپرستی میں کچھ این جی اوز سرگرم عمل ہے حکومت اور انتظامیہ انہیں لگام دے قوم کی حیاء اور عصمت کے تحفظ کے لئے کسی قربانی سے دریغ نہیں کریں گے

انہوں نے سکھر میں درجنوں مساجد کو انتظامیہ کی جانب سے شہید کرنے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ انتظامیہ کی جانب سے اس قسم کا اسلام دشمن اور مساجد دشمن اقدام قبول نہیں کرینگے انہوں نے مطالبہ کیا کہ اس واقعہ میں ملوث اہلکاروں کے خلاف فوری طور پر کاروائی عمل میں لائی جائیں جبکے مساجد کی دوبارہ تعمیر کے احکامات پورے طور پر صادر کیے جائیں

اپنا تبصرہ بھیجیں