جام حکومت کو صرف جی حضوری کے علاوہ عوام کی خوشحالی سے کوئی غرض نہیں ہے:سرداراخترجان مینگل

خضدار(ویب ڈیسک ) قائد بی این پی سابق وزیراعلی’ بلوچستان رکن قومی اسمبلی سرداراخترجان مینگل نے کہاہے کہ موجودہ مرکزی حکومت کے ساتھ چھ نقاط کے علاوہ کئی دیگرمسائل پراتحاد تھا جب ہم نے دیکھا کہ ان پرعملدرآمدنہیں ہورہاتو ہم نے اپنی راھیں جداکرلیں۔ اس لئے کہ آپ نے ہمیں ووٹ دیکربھیجا تھاکہ آپ کے حقوق کے لئے آواز بلندکریں اس میں ہم کہاں تک کامیاب ہوئے یہ وقت ہی بتائیگا آپ اپنے ووٹ کے زریعے جو عزت بخشی ہے یہی ہمارے لئے کافی ہے

ہم جہاں بھی رہے آپ کے ننگ وناموس اورخوشحالی کے لئے جدجہدجاری رکھینگے۔ان خیالات کا اظہارسرداراخترجان مینگل نے گزشتہ روزخضدارمیں بی این پی کے ضلعی کابینہ وتحصیل کابینہ کے عہدیداراں سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔اس موقع پر بی این پی کے ضلعی سینئرنائب صدر شفیق الرحمان ساسولی اہم پی اے میراکبرمینگل میرگورگین مینگل ایم پی اے میرحمل کلمتی میرسعداللہ خان غلام نبی ایڈوکیٹ تحصیل صدرحاجی اقبال بلوچ عبدالستارموسیانی ایوب عالیزئی امداد مینگل جنرل سیکریٹری محمدبخش مینگل پریس سیکریٹری ندیم گرگناڑی حضوربخش مینگل رئیس غلام مصطفی’ گزگی میرعمران مینگل میرصادق غلامانی سفرخان مینگل بشیراحمد مینگل اسلم نوتانی، سعیداحمدنوتانی ودیگر موجود تھے۔ انہوں نے کہاکہ جب ہم مرکزمیں حکومت کی حمایت کی تو اس کا مطلب ہرگزیہ نہیں تھا

کہ ہمیں مراعات ملے اگرمراعات کی لالچ ہوتی تو ہمیں اچھے اچھے وزارتوں کے ساتھ دیگرمراعات ملتے مگرہم نے صرف بلوچ عوام کے حقوق کے لئے حکومت کی حمایت کی جب ہمارے مطالبات پرعمل نہ ہواتوحکومت کوچھوڑکرحزب اختلاف میں آئے یہاں حزب اختلاف کے تمام جماعتوں نے ملکرپی ڈی ایم کی بنیاد رکھی ہم پی ڈی ایم میں شامل ہوکر بلوچ عوام کی حقوق کے لئے جدوجہد کا بیڑا اٹھایا ہے ۔ انہوں نے جام حکومت کے بارے میں کہا کہ جام صاحب کی حکومت کو صرف اس لئے لایا گیا ہے کہ اسے جی حضوری کے علاوہ عوام کی خوشحالی سے کوئی غرض نہیں ہے اسے اب تو خواب میں بھی بی این پی کے جھنڈے نظرآتے ہیں

جام صاحب نے بی این پی کو جس تعصب کی نظردیکھ رہاہے وہ کسی سی ڈھکی چپی بات نہیں بی اہن پی کو ختم کرنے کی جام صاحب کے پیش روحوں نے بھی خواب دیکھا تھا مگروہ ختم ہوئے لیکن بی این پی تمام قربانیوں کے باوجود زندوجاویدہے اورقیامت تک زندہ رہے گا۔انہوں نے کارکنوں سے مخاطب ہوکرکہاکہ آپ نے جو عزت مجھے دیا ہے شاید یہ عزت کسی اورقسمت والے کو ملے آج میرے پاس کوئی حکومتی عہدہ نہیں ہے

لیکن آپ کی وجہ سے مجھے دنیامیں عزت دی جاتی ہے۔ انہوں نے کارکنوں کو ہدایت کی کہ پچیس اکتوبر کو پی ڈی ایم کی جلسہ عام کو کامیاب بنانے کے لئے بھرپور کوشش کریں تاکہ عوامی قوت کے ساتھ موجودہ حکومت کی درودیوار کو ہلایا جاسکے۔اس موقع پرمختلف وفودنے سرداراخترجان مینگل سے ملاقات کرکے اپنے مسائل سے انہیں آگاہ کیا۔ قبل ازین سرداراخترجان مینگل جمیعت علماء اسلام کے مرکزی رہنماء مولانا قمرالدین کے صاحبزادے کی اورسینیٹرمولانا فیض محمدسمانی کے بڑے بھائی کے انتقال پر تعزیت کااظہارکیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں