ملک دشمن سرگرمیوں، اغواء اور قتل سمیت سنگین جرائم میں ملوث افراد کو سزائوں میں ریلیف نہیں ملے گا،صوبائی وزیر داخلہ میر ضیاء اللہ لانگو

کوئٹہ(این این آئی)صوبائی وزیر داخلہ میر ضیاء اللہ لانگو نے ایپکس کمیٹی کے اجلاس میں کیے جانے والے فیصلے کی روشنی میں ڈسٹرکٹ جیل کوئٹہ کا دورہ کیا اور کرونا وائرس کے پھیلاؤ کی روک تھام کے پیش نظر معمولی سزا یافتہ مجرموں کی، سی آر، پی، سی،402,401 کے تحت رہائی کے عمل کا جائزہ لیا اور جرمانہ ادا نہ کرنے کی وجہ سے اسیر 20 قیدیوں کے جرمانے اپنی جیب سے ادا کیے، صوبائی وزیر کا اس موقع پر کہنا تھا کہ ملک دشمن سرگرمیوں، اغواء اور قتل سمیت سنگین جرائم میں ملوث افراد کو ریلیف نہیں ملے گا، وزیر اعلیٰ بلوچستان کے کوآرڈینیٹر بلال خان کاکڑ بھی ان کے ہمراہ تھے. آئی جی جیل خانہ جات نے صوبائی وزیر داخلہ کو کرونا وائرس سے متعلق جیل میں موجودہ صورتحال بارے بریفنگ دی اوربتایا کہ 708 قیدیوں کی سکریننگ کی گئی جس میں جیل اسٹاف بھی شامل تھا، 78 قیدیوں کو پاکستان پریزن رول 216 کے تحت رہائی دی گئی ہے صوبائی وزیر داخلہ نے آئی جی جیل خانہ جات کو ہدایت کی کہ نئے آنے والے قیدیوں کو الگ بیرک میں رکھا جائے جب تک کہ ان کی اسکریننگ کا عمل مکمل نہیں ہوتا۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت کرونا وائرس کی وجہ سے پوری دنیا مشکلات کا سامنا کررہی ہے ان گنت پریشانیوں میں قیدیوں کے رشتے داروں کو شدید تشویش ہے کہ اگر ایران کی طرح پاکستان میں بھی خدانخواستہ قیدیوں میں کرونا وائرس پھیل گیا تو اس کے خوفناک نتائج سامنے آنے کا اندیشہ ہے، جس کے پیش نظر صوبہ بھر کی جیلوں میں قید اسیران کے حوالے سے صوبائی حکومت نے ضروری اقدامات اٹھائے ہیں تاکہ جیلوں میں قیدیوں کی تعداد کم کر کے وائرس کے پھیلاؤ کے ممکنہ خدشات کو کم کیا جاسکے.

اپنا تبصرہ بھیجیں